Saturday , 18 November 2017, 09:36 AM
Home / Technology / Lakri Se Bani Pehli Car 2020 Tak Sarrak Par Aajay Gi

Lakri Se Bani Pehli Car 2020 Tak Sarrak Par Aajay Gi

Wooden Car Tokyo : Japani Anjiniyron Ne Lakri Se Haasil Honay Walay Ajza Se Car Bananay Ka Elaan Kya Hai Jo Mojooda Gariyon Ke Wazan Ke Panchwin Hissay Ke Barabar Aur Folaad Se Bhi Paanch Gina Mazboot Hogi .

Mahireen Ke Mutabiq Darakhton Se Haasil Shuda Cellulose Nanofibers Se Aglay Chand Ashron Mein Gariyaan Bananay Ka Khawab Sharminda Tabeer Hoga. Kyoto University Ke Mahireen Aur Karon Ke Purzey Bananay Wali Barri Companian Nanofibers Mein Plastic Shaamil Karne Par Aik Arsay Se Kaam Kar Rahi Hain. Is Ke Liye Lakri Ke Goday Ke Reshon Ko Mazeed Mukhtasir Karte Hue Kayi So Mayikron Tak Bareek Karkay Istemaal Kya Jaye Ga .

Lakri Wooden Car
Wazeh Rahay Ke Aik Mayikron Aik Mili Meter Ka Bhi Aik Hazarwan Hissa Hota Hai. Lakri Ke Itnay Bareek Reshon Ko Cellulose Nanofibers Kaha Jata Hai Jo Ab Bhi Siyahi Se Le Kar Transparent Display Tak Ki Tayari Mein Istemaal Kiye Ja Rahay Hain .

Karon Ke Liye Lakri Istemaal Karne Ka Tareeqa’ Kyoto Process’ Kehlata Hai Jis Mein Lakri Ke Barady Ko Keemiyai Amal Se Guzaar Kar Is Mein Plastic Milaya Jata Hai Aur Usay Mazeed Bareek Kar Ke Nanofibers Tayyar Kiye Jatay Hain. Kyoto Process Se Purzon Ki Tayari Ki Laagat Ghatt Kar Panchwin Hissay Ke Barabar Ho Gayi Hai Warna Yeh Bohat Mehanga Nuskha Tha .

Kyoto University Ke Professor Hero Aki Yanu Is Technology Ke Maahir Hain Aur Un Ka Daawa Hai Ke 2030 Tak Cellulose Nanofibers Ki Aik Klov Miqdaar Ki Qeemat Aadhi Ho Jaye Gi Jo Is Waqt 1000 Rupay Fi Klov Hai. Qeemat Mein Kami Se Gariyon Ki Body Cellulose Nanofibers Se Banana Bohat Had Tak Mumkin Ho Jaye Ga .

Is Ka Sab Se Bara Faida Yeh Hoga Ke Karen Halki Phulki Ho Jaien Gi Aur Inhen Battery Se Chalana Mumkin Ho Jaye Ga. Is Terhan Kam Kharch, Mazboot Aur Mahol Dost Karon Ki Tayari Mein Inqilab Aa Jaye Ga .
Taham Kayi Companian Gariyon Ka Wazan Kam Karne Ke Liye Nnat Nai Technology Par Kaam Kar Rahi Hain Jin Mein Bi Am W Bhi Shaamil Hai. Is Company Ne Apni Electric Cars Mein Fibre Reinforced Polymer ( CFRP ) Istemaal Kya Hai Jabkay Is Waqt High Tensile Steal Aur Aluminium Ki Bhartain ( Aloiez ) Halki Swaryon Ki Tayari Mein Aam Istemaal Ho Rahay Hain .

Toyota Aur Muzda Companiyon Ke Numaindon Ne Bhi Umeed Zahir Ki Hai Ke Cellulose Nanofibers se Halki Phulki Aur Mazboot Gariyon Ki Tayari Mumkin Ho Sakay Gi. Tawaqqa Hai Ke Is Se Kam Wazan, Kam Qeemat, Bakfayt Aur Mazboot Barqi Karon Ka Naya Inqilab Aaye Ga .

 

ٹوکیو: جاپانی انجینیئروں نے لکڑی سے حاصل ہونے والے اجزا سے کار بنانے کا اعلان کیا ہے جو موجودہ گاڑیوں کے وزن کے پانچویں حصے کے برابر اور فولاد سے بھی پانچ گنا مضبوط ہوگی۔

ماہرین کے مطابق درختوں سے حاصل شدہ سیلولوز نینوفائبر سے اگلے چند عشروں میں گاڑیاں بنانے کا خواب شرمندہ تعبیر ہوگا۔ کیوٹو یونیورسٹی کے ماہرین اور کاروں کے پرزے بنانے والی بڑی کمپنیاں نینوفائبرز میں پلاسٹک شامل کرنے پر ایک عرصے سے کام کر رہی ہیں۔ اس کے لیے لکڑی کے گودے کے ریشوں کو مزید مختصر کرتے ہوئے کئی سو مائیکرون تک باریک کرکے استعمال کیا جائے گا۔
واضح رہے کہ ایک مائیکرون ایک ملی میٹر کا بھی ایک ہزارواں حصہ ہوتا ہے۔ لکڑی کے اتنے باریک ریشوں کو سیلولیوز نینوفائبرز کہا جاتا ہے جو اب بھی سیاہی سے لے کر ٹرانسپیرنٹ ڈسپلے تک کی تیاری میں استعمال کیے جا رہے ہیں۔
کاروں کے لیے لکڑی استعمال کرنے کا طریقہ ’کیوٹو پروسیس‘ کہلاتا ہے جس میں لکڑی کے برادے کو کیمیائی عمل سے گزار کر اس میں پلاسٹک ملایا جاتا ہے اور اسے مزید باریک کر کے نینوفائبرز تیار کیے جاتے ہیں۔ کیوٹو پروسیس سے پرزوں کی تیاری کی لاگت گھٹ کر پانچویں حصے کے برابر ہو گئی ہے ورنہ یہ بہت مہنگا نسخہ تھا۔

کیوٹو یونیورسٹی کے پروفیسر ہیرو آکی یانو اس ٹیکنالوجی کے ماہر ہیں اور ان کا دعویٰ ہے کہ 2030 تک سیلولیوز نینوفائبر کی ایک کلو مقدار کی قیمت آدھی ہو جائے گی جو اس وقت 1000 روپے فی کلو ہے۔ قیمت میں کمی سے گاڑیوں کی باڈی سیلولیوز نینوفائبرز سے بنانا بہت حد تک ممکن ہو جائے گا۔
اس کا سب سے بڑا فائدہ یہ ہوگا کہ کاریں ہلکی پھلکی ہوجائیں گی اور انہیں بیٹری سے چلانا ممکن ہو جائے گا۔ اس طرح کم خرچ، مضبوط اور ماحول دوست کاروں کی تیاری میں انقلاب آ جائے گا۔
تاہم کئی کمپنیاں گاڑیوں کا وزن کم کرنے کے لیے نت نئی ٹیکنالوجی پر کام کر رہی ہیں جن میں بی ایم ڈبلیو بھی شامل ہے۔ اس کمپنی نے اپنی الیکٹرک کاروں میں فائبر ری انفورسڈ پولیمر (سی ایف آر پی) استعمال کیا ہے جبکہ اس وقت ہائی ٹینسائل اسٹیل اور المونیم کی بھرتیں (ایلوئیز) ہلکی سواریوں کی تیاری میں عام استعمال ہو رہے ہیں۔
ٹویوٹا اور مزدا کمپنیوں کے نمائندوں نے بھی امید ظاہر کی ہے کہ سیلولیوز نینو فائبرز سے ہلکی پھلکی اور مضبوط گاڑیوں کی تیاری ممکن ہو سکے گی۔ توقع ہے کہ اس سے کم وزن، کم قیمت، باکفایت اور مضبوط برقی کاروں کا نیا انقلاب آئے گا۔

Check Also

oppo

2 Minute Mobile Charge Karen Aur Do Ghantay Smart Phone Istemaal Karen

Islamabad : Chain Ki Aik Smart Phone Tayyar Karne Wali Company Oppo Ne Smart Phones …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *